Urdu to the national

کینیڈا: اردو کو قومی، پنجابی کو ماں بولی زبان کے طور پر اندراج کیلیے درخواست

کینیڈا: اردو کو قومی، پنجابی کو ماں بولی زبان کے طور پر اندراج کیلیے درخواست

اوٹاوا: پاکستانی ہائی کمیشن نے کینیڈا کی حکومت سے درخواست کی ہے کہ مردم شماری 2021 میں اردو زبان کو بطور انفرادی قومی زبان شامل کیا جائے۔

پاکستانی ہائی کمیشن کی جانب سے کینیڈین حکومت سے یہ درخواست بھی کی گئی ہے کہ ماں بولی کے خانے میں پنجابی شاہ مکھی اور پنجابی گورمکھی کا علیحدہ زبانوں کے طور پر اندراج کیا جائے۔

خلیجی اخبار کے مطابق کینیڈا میں مقیم پاکستانی کینیڈین شہریوں کی تنظیموں نے ہائی کمیشن کو اردو کو بطور قومی زبان جب کہ پنجابی کو مقامی زبان کے طور پر اندراج کرانے کی کوششیں کرنے کے لیے کہا تھا۔

اخبار کے مطابق پاکستانی ہائی کمیشن کے ترجمان کا کہنا ہے کہ ہائی کمیشن نے متعلقہ کینیڈین حکام کو ایک خط کے ذریعے اردو زبان کو کینیڈین مردم شماری میں انفرادی قومی زبانوں کی فہرست میں شامل کرنے کی درخواست کی ہے تاکہ کینیڈا میں آباد پاکستانی کینیڈین شہریوں کے قیمتی ثقافتی ورثہ کی پہچان اور ترویج ہو سکے۔

پاکستانی ہائی کمیشن کی جانب سے لکھے جانے والے خط میں کینیڈین حکام کو باور کرایا گیا ہے کہ اردو پاکستان کی قومی زبان ہے اور پاکستان کے متنوع ثقافتی قومی منظر نامے میں رابطے اور ہم آہنگی کے مضبوط ذریعے کے طور پر اپنا بھرپور کردار ادا کر رہی ہے۔

پاکستان ہائی کمیشن کینیڈا نے خط میں کینیڈین حکام کو مستقبل میں حوالہ جات اور مردم شماری میں ماں بولی کے طور پر پنجابی شاہ مکھی اور پنجابی گورمکھی کے علیحدہ زبانوں کے طور پر اندراج کرنے کی بھی درخواست کی ہے کیونکہ ان دونوں زبانوں کو اردو اور ہندی کی طرح علیحدہ رسم الخط میں لکھا جاتا ہے.

اردو کا لفظ ’اچھا‘ کیمبرج ڈکشنری میں شامل

خلیجی اخبار اردو نیوز کے مطابق کینیڈین مردم شماری میں اس اہم فرق کو تسلیم نہیں کیا گیا ہے اور محض پنجابی گور مکھی کو میڈیا اور متن کی ترویج و اشاعت کے لیے ہی وسائل مختص کیے جاتے ہیں۔

Leave a Reply