China successfully lands robot on Mars

چین نے کامیابی سے مریخ پر روبوٹ اتار لیا

چین نے کامیابی سے مریخ پر روبوٹ اتار لیا

چین نے مریخ پر کامیابی سے ایک روبوٹ اتار لیا ہے۔ چھ پہیوں والے ژورونگ روبوٹ نے مریخ کے نصف کُرّہ شمالی میں موجود ایک وسیع میدانی علاقے یوٹوپیا پلینیٹیا پر لینڈ کیا۔

اس خلائی گاڑی نے بحفاظت اترنے کے لیے ایک حفاظتی کیپسول، ایک پیراشوٹ اور ایک راکٹ پلیٹ فارم کا استعمال کیا۔ اس کام کی مشکل نوعیت کو دیکھتے ہوئے یہ ایک حیرت انگیز کامیابی ہے۔

چینی سرکاری میڈیا نے قومی خلائی انتظامیہ کے حوالے سے ہفتے کے روز بتایا کہ یہ خلائی گاڑی کامیابی کے ساتھ مریخ کی سطح پر اتار دی گئی ہے۔

برطانوی نشریاتی ادرے بی بی سی کے مطابق اب تک صرف امریکہ نے ہی مریخ پر کامیابی سے لینڈ کرنے میں ملکہ حاصل کیا ہے۔ یہ کوشش کرنے والے دیگر تمام ممالک کے لینڈرز یا تو کریش کر گئے یا پھر سطح پر اترنے کے فوراً بعد ہی اُن سے رابطہ منقطع ہوگیا۔

چین کے صدر شی جن پنگ نے ایک خصوصی پیغام میں مشن کی ٹیم کو اس کی ‘حیران کُن کامیابی’ پر مبارکباد دی۔

‘آپ میں بہادری تھی کہ آپ نے یہ چیلنج قبول کیا، اس میں مہارت حاصل کرنی چاہی اور ہمارے ملک کو خلائی تحقیق کی اگلی صفوں میں لا کھڑا کیا

امریکہ کے خلائی ادارے ناسا میں ہیڈ آف سائنس تھامس زربوچن نے بھی چین کو مبارک باد دی۔

‘میں عالمی سائنسی برادری کے ہمراہ پراُمید ہوں کہ اس مشن کے ذریعے سرخ سیارے کے بارے میں انسانی علم میں اضافہ ہوگا۔’

روسی خلائی ایجنسی روس کوسموس نے کہا کہ یہ کامیابی مستقبل میں روس اور چین کے خلائی شعبے میں تعاون کے لیے اچھا شگون ہے۔

یہ روبوٹ سنیچر کو بیجنگ کے مقامی وقت کے مطابق شام سات بجے (عالمی وقت کے مطابق جمعے کی رات 11 بجے) مریخ پر اترا۔

اسے اپنے سولر پینلز پھیلانے اور زمین پر سگنل واپس بھیجنے میں 17 منٹ لگے۔

ژورونگ کا مطلب آگ کا خدا ہے۔ چینی انجینیئروں کو سگنلز پہنچنے میں تاخیر سے بھی نمٹنا تھا۔ مریخ اس وقت ہم سے 32 کروڑ کلومیٹر دور ہے جس کا مطلب ہے کہ وہاں سے بھیجا گیا ریڈیو سگنل زمین پر پہنچنے میں تقریباً 18 منٹ لگتے ہیں۔

سائنسدانوں کو توقع ہے کہ وہ اس روور سے 90 مریخی دنوں تک کام لے سکتے ہیں جس دوران یہ وہاں کی زمینی صورتحال کا جائزہ لے گا۔ مریخ کا ایک دن 24 گھنٹوں اور 39 منٹ کا ہوتا ہے

اس روور پر ایک لیزر موجود ہے جس سے یہ وہاں موجود پتھروں کی کیمیائی ساخت کا پتا لگا سکتا ہے جبکہ اس پر ایک ریڈار ہے جس کا کام زیرِ سطح پانی تلاش کرنا ہے۔

یوٹوپیا پلینیٹیا وہی خطہ ہے جہاں پر ناسا نے سنہ 1976 میں اپنا وائیکنگ ٹو مشن اتارا تھا۔

یہ 3000 کلومیٹر پر پھیلا ایک وسیع و عریض علاقہ ہے اور کچھ ثبوت ہیں کہ یہ کسی زمانے میں سمندر ہوا کرتا تھا۔

سیٹلائٹس کی لی گئی تصاویر سے عندیہ ملتا ہے کہ اس کی گہرائی میں بڑی مقدار میں برف موجود ہے۔

Leave a Reply