Pictures of 4 Pakistani sisters caused controversy

4 پاکستانی بہنوں کی تصاویر نے تنازع کھڑا کردیا ۔۔ مشہور ڈیزائنر ماریہ بی حکومت پر کیوں برس پڑیں؟

4 پاکستانی بہنوں کی تصاویر نے تنازع کھڑا کردیا ۔۔ مشہور ڈیزائنر ماریہ بی حکومت پر کیوں برس پڑیں؟

پاکستان میں آئے روز کوئی نہ کوئی شخص کسی سے ناراض ہوتا دکھائی دیتا ہے، کسی کی صلح ہو جاتی ہے تو کسی کا دل یونہی جلتا رہتا ہے۔ اب جیسے آپ ان بہنوں کی تصویر ہی دیکھ لیں، دیکھنے میں کتنی حسین لگ رہی ہیں، لیکن یہ جس ڈیزائنر کے کپڑے پہن رہی ہیں وہ بھارتی ڈیزائنر ہے اور جس جگہ شوٹ کروایا جا رہا ہے وہ لاہور کا کوئی مقام ہے اور جو کیمرہ مین تصاویر بنا رہا ہے وہ بھی پاکستانی ہے، یہاں تک کہ جس نے سارا سیٹ تیار کیا، سجاوٹ کی، ایونٹ پلاننگ کی وہ بھی پاکستانی ہے۔

مگر افسوس کہ ایک پاکستانی ڈیزائنر اس سےبہت ناراض ہیں جوکہ ماریہ بی ہیں۔ ماریہ بی کو حکومت اور بھارتی ڈیزائنر کی پاکستان میں ہونے والی اس شوٹنگ سے مسئلہ یوں ہو رہا ہے کیونکہ ماریہ کہتی ہیں کہ: ” جب پاکستانی ڈیزائنر کے ماڈل شوٹس بھارت میں نہیں ہوتے تو بھارتیوں کے کپڑوں کی نمائش کے لئے شوٹنگ یہاں کیوں کی جا رہی ہے؟ ”

اب حکومت کو کشمیر کا معاملہ یاد نہیں آ رہا ہے؟ فیشن ڈیزائنر ماریہ بی نے پاکستان میں بھارتی فیشن ڈیزائنر ابھیناو مشرا کی ملبوسات کی شوٹنگ پرناراضگی کا اظہار کرتے ہوئے سوال کیا کہ اب حکومت کے دعوے کدھر گئے؟

ماریہ بی نے اپنی انسٹاگرام اسٹوریز میں بھارتی فیشن ڈیزائنر کی حال ہی میں شوٹ کی گئی تصاویر و ویڈیوز کے اسکرین شاٹ شیئر کرتے ہوئے بتایا کہ ابھیناو مشرا کی ملبوسات کی شوٹنگ پنجاب کے دارالحکومت لاہور میں ہوئی۔

اس فوٹو شوٹ کی تصاویر ابھیناو مشرا نے اپنے انسٹاگرام پر شیئر کیں اور انہوں ماڈلنگ کرنے والی چاروں بہنوں کا شکریہ ادا کیا، لیکن یہاں انہوں نے یہ واضح نہیں لکھا کہ فوٹو شوٹ لاہور میں ہوا تھا۔ اس پوسٹ میں انہوں نے ماڈل موزی صوفی کو مینشن کیا جبکہ باقی تینوں کے نام نہیں بتائے گئے۔ البتہ ماریہ بی کو ان بہنوں کے بھارتی ڈیزائنر کے شوٹ کرنے پر بھی بڑا اعتراض ہے۔

Leave a Reply