پاکستان سپر لیگ 6: شاہنواز دھانی کا لاڑکانہ واپسی پر شاندرا استقبال، سوشل میڈیا پر بھی مبارکباد کے پیغامات

19 منٹ قبل

،تصویر کا ذریعہTwitter/@ShahnawazDahani

پاکستان سپر لیگ کے ہر سیزن میں ابھرتے ہوئے کھلاڑیوں پر ہمیشہ گہری نظر رکھی جاتی ہے تاکہ یہ معلوم ہو سکے کہ ان میں سے کون ایسا ہے جو قومی کرکٹ ٹیم کی مستقبل میں نمائندگی کر سکتا ہے۔

ماضی میں رومان رئیس، حسین طلعت، عماد بٹ، محمد موسی خان، نسیم شاہ، شاہین آفریدی اور حسن علی چند ایسے کھلاڑی ہیں جنھوں نے ایمرجنگ کیٹگری کی مدد سے مختلف ٹیموں میں شمولیت اختیار کی اور پھر قومی ٹیم میں بھی جگہ بنانے میں کامیاب ہوئے۔

لیکن یہ کہنا غلط نہیں ہو گا کہ جو مقبولیت چھٹے ایڈیشن میں ملتان کی جانب سے اپنا پہلا پی ایس ایل کھیلنے والے شاہنواز دھانی کے نصیب میں آئی وہ کسی اور کو نہیں ملی۔

حال میں اختتام پذیر ہونے والے پی ایس ایل 6 کے بہترین بولر قرار دیے جانے والے شاہنواز دھانی نے فاتح ٹیم ملتان سلطانز کی نمائندگی کرتے ہوئے ٹورنامنٹ میں 20 وکٹیں حاصل کیں اور جب وہ اپنے آبائی شہر لاڑکانہ واپس لوٹے تو ان کا شاندار استقبال کیا گیا۔

اتوار کی صبح شاہنواز دھانی نے اپنے ٹوئٹر اکاؤنٹ سے لوگوں کی جانب سے دی گئی نیک تمناؤں پر پیغام دیتے ہوئے کہا کہ وہ کس طرح ان لوگوں کا شکریہ ادا کریں جنھوں نے لاڑکانہ کی تپتی گرمی میں ان کا استقبال کرنے کے لیے گھنٹوں انتظار کیا۔

’یہ بہت عمدہ احساس تھا۔ میں ان تمام لوگوں کا بہت شکر گزار ہوں جنھوں نے مجھے اپنا پیار دیا، عزت دی اور میری حمایت کی۔ انشااللہ میں ہمیشہ آپ کا سر فخر سے بلند کروں گا۔‘

ٹویٹ

،تصویر کا ذریعہTwitter/@ShahnawazDahani

شاہنواز دھانی کی ٹویٹ پر ان کے فینز نے بھی ان کی مزید ہمت بڑھائی اور کہا کہ وہ مستقبل میں بھی ایسے ہی کامیابیاں سمیٹیں۔

پاکستان کے فاسٹ بولر اور پی ایس ایل میں اسلام آباد یونائیٹڈ کی نمائندگی کرنے والے حسن علی نے بھی شاہنواز دھانی کو پیغام دیتے ہوئے ٹویٹ کی کہ ’بہت مبارک ہو دھانی، آپ اس عزت اور پیار کے مستحق ہیں بھائی، اپنے خاندان کا، اپنے وطن کا سر فخر سے مزید بلند کریں۔‘

ایک اور صارف اسلم بزدار لکھتے ہیں کہ ہم انتظار کر رہے ہیں کہ آپ قومی کرکٹ ٹیم کا جلد حصہ بنیں۔

واضح رہے کہ اس ماہ کے آغاز میں جب پی ایس ایل کا دوسری لیگ مرحلہ شروع بھی نہیں ہوا تھا تو پاکستان کرکٹ بورڈ نے انگلینڈ اور ویسٹ انڈیز کے دورے کے لیے قومی ٹیم کا اعلان کر دیا تھا جس میں ایک روزہ اور ٹی ٹوئنٹی سکواڈ میں تو دھانی کا نام نہیں آیا لیکن ویسٹ انڈیز دورے کی ٹیسٹ ٹیم میں ان کا نام شامل تھا۔

پاکستان پیپلز پارٹی کی سندھ سے تعلق رکھنے والی رکن قومی اسمبلی نفیسہ شاہ نے بھی دھانی کی ٹویٹ پر پیغام دیتے ہوئے کہا کہ ’بہت مبارک ہو، سندھ کو آپ پر فخر ہے، پاکستان کو آپ پر فخر ہے۔ دہائیوں سے ہمارے سندھ اور بلوچستان کے دیہات کے کھلاڑیوں کو قومی ٹیموں میں جگہ نہیں ملتی تھی۔ امید ہے کہ اب اس میں بہتری لائی جائے گی اور قابل کھلاڑیوں کو ہر جگہ ڈھونڈا جائے گا۔‘

ایسا ہی تبصرہ کرتے ہوئے معاذ پرویز نے ٹویٹ کی کہ ’سوچیں ملک کے دیگر چھوٹے شہروں میں ایسے کتنے راکٹ سٹارز بھرے ہوئے ہوں گے۔‘

ٹویٹ

،تصویر کا ذریعہTwitter/@Mianbelaal

اسی حوالے سے مزید پڑھیے

میاں بلال نے دھانی کی تصاویر پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ ’کبھی کوئی کھلاڑی ایسا ویلکم دیکھ کر خوشی کے آنسو بھی بہاتا ہو گا؟ اکثر تو غرور اور شہرت کے نشے میں دھت ہو جاتے ہیں۔‘

صارف اظہر خان لکھتے ہیں کہ آپ کی کامیابی عام آدمی کی کامیابی ہے۔ آپ کی محنت، چاہنے والوں کی دعائیں اور آپ کی میدان میں انکساری کی وجہ سے آپ کو یہ لمحات میسر آئے ہیں۔

چند صارفین نے دھانی کی جانب سے انگریزی زبان میں ٹویٹ کرنے پر ٹوکا اور ان میں سے ایک نے لکھا کہ کھلاڑیوں کے پی آر ایجنٹس کو انھیں ویسا ہی پیش کرنا چاہیے، جیسے وہ ہیں.

‘دھانی کو شاید خود بھی نہ پتا ہو کہ یہ کیا لکھا ہے. سادہ اردو میں ان کی طرف سے پیغام آئیں تو بہتر ہے۔ کیوں اسے وڈھا انگریز بنا کر پیش کرنا ہے۔ کب ذہنی غلامی سے نکلیں گے۔‘

کرکٹ

،تصویر کا ذریعہTwitter/@ShahnawazDahani

ایک اور صارف نے لکھا کہ ’بھائی آپ اردو میں ٹویٹ کیا کریں تاکہ آپ کے سب چاہنے والوں کو سمجھ آئے شکریہ۔‘

یاد رہے کہ دو روز قبل پی ایس ایل 6 کے فائنل میں جیت حاصل کرنے کے بعد شاہنواز دھانی نے سندھی زبان میں ٹویٹ کرتے ہوئے اپنے فینز کا شکریہ ادا کیا تھا۔

کرکٹ

،تصویر کا ذریعہGetty Images

شاہنواز دھانی کون ہیں؟

شاہنواز دھانی نے اپنی کلب کرکٹ لاڑکانہ کے الشہباز کلب کی طرف سے کھیلی ہے۔ ان کے بڑے بھائی پولیس میں سپاہی ہیں جنھوں نے والد کے انتقال کے بعد شاہنواز کو کرکٹ کھیلنے کی نہ صرف اجازت دی بلکہ ان کی کھیل اور تعلیم کے سلسلے میں ہرممکن رہنمائی بھی کی۔

شاہنواز دھانی دو سال سے فرسٹ کلاس کرکٹ کھیل رہے ہیں۔

فروری میں ملطان سلطانز کی جانب سے ایمرجنگ کیٹگری میں شامل ہونے کے بعد انھوں نے بی بی سی کے عبدالرشید شکور سے بات کرتے ہوئے بتایا تھا کہ ’میں خود کو اس اعتبار سے خوش قسمت سمجھتا ہوں کہ سینیئر کرکٹرز کی پاکستانی ٹیم میں مصروفیت کے باعث مجھے سندھ کی فرسٹ الیون میں شامل ہونے کا موقع مل گیا۔‘

شاہنواز دھانی کہتے ہیں ’میرے گاؤں میں پہلے کسی کو پی ایس ایل یا کرکٹ کا پتا نہیں تھا لیکن اب پورا گاؤں خوش ہے۔‘



Source link

Leave a Reply