پشاور: مسجد پر حملے میں کم از کم 20 افراد ہلاک، درجنوں زخمی

20 منٹ قبل

پاکستان کے شہر پشاور کے علاقے قصہ خوانی بازار کی ایک مسجد میں نمازِ جمعہ کے دوران دھماکے میں کم از کم 20 افراد ہلاک اور درجنوں افراد زخمی ہوئے ہیں۔

یہ دھماکہ قصہ خوانی بازار کی گلی کوچہ رسالدار میں شیعہ مسلک کی مرکزی جامع مسجد میں پیش آیا ہے۔

مقامی حکام کا کہنا ہے کہ اس واقعے میں زخمیوں کی تعداد کافی زیادہ ہے اور اس وقت 15 ایمبولینسز موقع پر پہنچ چکی ہیں اور امدادی کارروائیاں جاری ہیں۔ سیکیورٹی اداروں کے اہلکاروں نے علاقے کو گھیرے میں لے لیا ہے۔

نجی ٹی وی چینل جیو نیوز سے بات کرتے ہوئے ایس ایس پی آپریشنز ہارون رشید نے بتایا ہے کہ یہ حملہ بظاہر خودکش حملہ تھا۔

ان کا کہنا تھا کہ حملہ آور نے پہلے گیٹ پر موجود پولیس کے محافظوں کو نشانہ بنایا اور ان میں سے ایک پولیس کانسٹیبل ہلاک ہو چکا ہے۔

پشاور

‘نماز کی تیاری جاری تھی‘

عینی شاہد علی حیدر نے جائے وقوع کے قریب بی بی سی سے بات کرتے ہوئے کہا کہ جس وقت نمازِ جمعہ کی تیاری جاری تھی اس وقت کم از کم ایک حملہ آور پستول لے کر مسجد میں آیا اور نمازیوں کو نشانہ بنانا شروع کر دیا۔ فائرنگ کے بعد حملہ آور نے بم کا دھماکہ کیا۔

بی بی سی کے نامہ نگار بلال احمد کے مطابق دھماکے کے بعد اہل علاقہ میں شدید غم وغصہ پایا جاتا ہے، کسی بھی پولیس والے کو دھماکے کی جگہ پر نہیں چھوڑا جارہا اور اب سے کچھ دیر قبل ہی پاکستانی فوج کے اہلکار دھماکہ کی جگہ پر پہنچیں ہیں۔

اس خبر کو مزید اپ ڈیٹ کیا جا رہا ہے۔



Source link