پی ایس ایل سیون: عماد وسیم اور انڈر 19 کپتان قاسم اکرم کی شاندار بیٹنگ کے باوجود کراچی کنگز ایک رن سے ہارگئی

  • عبدالرشید شکور
  • بی بی سی اردو ڈاٹ کام، کراچی

6 منٹ قبل

،تصویر کا ذریعہPCB

ہر گزرتے دن ایک کے بعد ایک شکست کراچی کنگز کے زخموں کو گہرا کرتی جارہی تھی لیکن پیر کی شب کی شکست شاید وہ اس لیے کبھی نہیں بھولے گی کہ جیت قریب آ کر ہاتھ سے نکل گئی۔

اسلام آباد یونائیٹڈ نے یہ میچ ڈرامائی انداز میں صرف ایک رن سے جیت لیا۔

یہ کراچی کنگز کی مسلسل ساتویں شکست ہے جس کے بعد اب وہ عملاً پلے آف کی دوڑ سے باہر ہوگئی ہے۔

اس شکست پر ایک سوشل میڈیا صارف نے تبصرہ کیا کہ آج تو لاہور والوں کو بھی کراچی پر ترس آ رہا ہو گا۔

اسلام آباد کی سات میچوں میں یہ چوتھی جیت تھی۔

اسلام آباد یونائیٹڈ کے بنائے گئے191 رنز 7 کھلاڑی آؤٹ کے جواب میں کراچی کنگز کی ٹیم 8 وکٹوں پر190 رنز بناسکی۔

یاد رہے کہ دونوں ٹیمیں کے درمیان کراچی میں کھیلا گیا میچ اسلام آْباد یونائیٹڈ نے 42رنز سے جیتا تھا جس میں وہ 177 رنز کے اسکور کا کامیابی سے دفاع کرنے میں کامیاب رہی تھی۔

فہیم اشرف کی ریسکیو اننگز

بابراعظم نے اس ایونٹ میں تیسری مرتبہ ٹاس جیت کر پہلے گیند عماد وسیم کے ہاتھ میں تھمانے کا فیصلہ کیا۔

میچ کے پہلے ہی اوور میں دو چھکے مارنے کے بعد تیسرے چھکے کی کوشش رحمن اللہ ُ گرباز کو مہنگی پڑگئی۔

میرحمزہ غیرمتاثرکن پہلے اوور کی تلافی دوسرے اوور میں کرنے میں کامیاب ہوگئے جب انہوں نے محمد اخلاق کو ایل بی ڈبلیو کردیا۔

اسلام آباد یونائیٹڈ کی دوسری وکٹ 26 رنز پر گری ۔اسکور 27 رنز پر تین وکٹ بھی ہوسکتا تھا اگر کرس جارڈن اسی اوور میں الیکس ہیلز کے دیے گئے چانس کو ایک ناقابل یقین کیچ میں تبدیل کردیتے۔

شاداب خان اور الیکس ہیلز نے پاور پلے کا اختتام 47 رنز پر کیا لیکن یہ دونوں اپنی اننگز کو بڑے اسکور میں تبدیل نہ کرسکے۔

الیکس ہیلز ایک چھکے اور تین چوکوں کی مدد سے25 رنز بناکر عمید آصف کی گیند پر بابراعظم کے ہاتھوں کیچ ہوئے۔

اسلام آباد یونائیٹڈ کے لیے شاداب خان کا آؤٹ ہونا ایک بڑا نقصان تھا جو تین چوکے اور ایک چھکے کے ساتھ 34 رنز بناکر عماد وسیم کی گیند کو کٹ کرنے کی کوشش میں بولڈ ہوئے۔

87 رنز پر چار وکٹیں گرنے کے بعد لیئم ڈاسن اور اعظم خان سے بڑی شراکت کی توقع پوری نہ ہوسکی۔ لیئم ڈاسن کو 15 رنز پر عماد وسیم نے جارڈن تھامسن کی گیند پر کیچ کرلیا۔

اعظم خان رن لینے کے بارے میں تذبذب کا شکار ہوئے اور نان اسٹرائیکر اینڈ تک پہنچنے سے پہلے ہی عمید آصف ، میر حمزہ کی تھرو پر بیلز گراکر انہیں ڈگ آؤٹ میں واپس بھیجنے کا سامان پیدا کرچکے تھے۔اعظم خان 22 رنز بناسکے۔

آصف علی ٹی ٹوئنٹی ورلڈ کپ میں کریم جنت کو لگاتار چار چھکے لگانے کے بعد آج پہلی بار اپنے اصل رنگ میں نظر آنے لگے تھے لیکن ایک چوکے اور تین چھکوں پر مشتمل ان کی 28 رنز کی اننگز کرس جارڈن کی گیند پر صاحبزادہ فرحان کے کیچ پر ختم ہوگئی۔

فہیم اشرف

،تصویر کا ذریعہPCB

پچھلے میچ میں نصف سنچری بنانے والے فہیم اشرف اس مرتبہ بھی ٹیم کے کام آئے ۔ان کےدو چھکوں اور تین چوکوں کی مدد سے صرف دس گیندوں پر بنائے گئے 29 رنز اسلام آْباد یونائٹڈ کے لیے ریسکیو ثابت ہوئے۔

اننگز کا 19واں اوور اسلام آباد یونائٹڈ کو 23 رنز دے گیا جس میں فہیم اشرف نے عمید آصف کو دو چوکے اور دو چھکے مارے۔

آخری گیند پر ڈرامائی نتیجہ

بابراعظم نے بھرپور اعتماد کے ساتھ نوجوان ذیشان ضمیر کو دو چوکے لگا کر کراچی اننگز کے حوصلے بلند کیے لیکن دوسری طرف اسلام آباد یونائیٹڈ کے ڈگ آؤٹ میں پریشانی کے آثار واضح دیکھے جاسکتے تھے کہ شاداب خان فٹنس مسئلے سے دوچار ہوکر میدان چھوڑنے پر مجبور ہوگئے تھے تاہم وہ بعد میں میدان میں واپس آگئے۔

نوجوان فاسٹ بولر ذیشان ضمیر کو بھی اپنے دوسرے ہی اوور میں ان فٹ ہوکر میدان سے باہر جانا پڑا حالانکہ اسی اوور میں انھوں نے اپنی زندگی کی قیمتی وکٹ بابراعظم کی صورت میں حاصل کی تھی۔ بابراعظم 13 رنز بناکر وکٹ کیپر اعظم خان کے ہاتھوں کیچ ہوئے۔

ذیشان ضمیر کا اوور مکمل کرنے کے لیے آنے والے لیئم ڈاسن نے اپنی پہلی ہی گیند پر جو کلارک کو صفر پر ایل بی ڈبلیو کرکے کراچی کنگز کو بڑا جھٹکا دیا۔

شرجیل خان کے ارادے خطرناک نظرآئے ۔انہوں نے فہیم اشرف کو ٹارگٹ بنا رکھا تھا۔ ان کے دوسرے اوور میں لگاتار تین چوکے مارنے کے بعد ان کے تیسرے اوور میں بھی ایک چوکا اور ایک چھکا مارتے ہوئے پاور پلے کا اختتام رنز49 دو کھلاڑی آؤٹ پر کیا۔

صاحبزادہ فرحان کی بیٹنگ میں جارحیت کا فقدان رہا اور ہر اوور کے بعد رن ریٹ کا بڑھتے رہنا شرجیل خان پر بھی دباؤ بڑھائے جارہا تھا۔

صاحبزادہ فرحان آؤٹ فیلڈ میں رحمن اللہ گرباز کے شاندار کیچ پر آؤٹ ہوئے۔

کراچی کنگز کو یہ ایڈوانٹیج بھی حاصل تھا کہ شاداب خان کے چار اوورز کون کرے گا لیکن آصف علی نے یہ کمی چونکا دینے والے انداز میں پوری کردی۔

آصف علی نے اپنے پہلے ہی اوور میں شرجیل خان اور محمد نبی کی وکٹیں حاصل کرڈالیں۔

شرجیل خان تین چھکوں اور چار چوکوں کی مدد سے 29گیندوں پر44 رنز بناسکے۔

آصف علی کے صبر کی داد دینی پڑے گی کہ اپنے دوسرے اوور میں دو کیچز ڈراپ ہونے پر بھی وہ مسکرا رہے تھے۔پہلا کیچ رحمن اللہ گرباز نے ڈراپ کیا اور پھر حسن علی بھی یہی غلطی کربیٹھے۔ دونوں مرتبہ بیٹسمین پاکستانی انڈر 19 ٹیم کےکپتان قاسم اکرم تھے۔

قاسم اکرم پر قسمت مہربان تھی۔ حسن علی کی گیند پر ان کا تیسرا کیچ بھی ڈراپ ہوا جو چھکے میں تبدیل ہوگیا۔

قاسم اکرم

،تصویر کا ذریعہPCB

اسلام آْباد کی خراب فیلڈنگ کراچی کنگز کو دوبارہ میچ میں واپس لے آئی۔

عماد وسیم اور قاسم اکرم کی 108 رنز کی شراکت کراچی کنگز کو جیت کے قریب لے آئی تھی۔

آخری دو اوورز میں جیت کے لیے 24رنز درکار تھے اور یہ ہدف آخری اوور تک صرف آٹھ رن رہ چکا تھا جس میں عماد وسیم نے وقاص مقصود کو چوکا لگایا۔

لیکن اسی اوور میں وہ 28 گیندوں پر چھ چوکوں اور تین چھکوں کی مدد سے 55 رنز بناکر آؤٹ ہوگئے تو تین گیندوں پر چار رنز درکار تھے۔

اسلام آباد یونائیٹڈ

،تصویر کا ذریعہPCB

وقاص مقصود نے جارڈن تھامسن کو بولڈ کیا تو آخری گیند پر جیت کے لیے دو رنز درکار تھے جس پر کرس جارڈن کا رن آؤٹ کراچی کنگز کو جیت سے دور لے گیا۔

قاسم اکرم صرف چھبیس گیندوں پر ایک چھکے اور چھ چوکوں کی مدد سے51 رنز بناکر ناٹ آؤٹ رہے۔

وقاص مقصود نے تین وکٹیں حاصل کیں اور کرس جارڈن کو رن آؤٹ بھی کیا۔

میچ کے بعد کراچی کے شائقین کو جہاں اس بات پر افسوس تھا کہ ان کی ٹیم نے پی ایس ایل میں مسلسل ساتویں ہار کا ریکارڈ قائم کیا ہے وہیں کم از کم ان کو اس بات کی تسلی تھی کہ ان کی ٹیم نے آج کے میچ کو پی ایس ایل کا سنسنی خیز میچ بنا دیا۔



Source link

Leave a Reply